روس کی عیاش ترین ملکہ کا قصہ

آج کے اس آرٹیکل کے اندر ہم لوگ کسی بادشاہ کے بارے میں بات نہیں کریں گے بلکہ ایسی ملکہ کے بارے میں بات کریں گے جس کے عاشقوں کی فہرست کے اندر نہ تو صرف انسان بلکہ جانور بھی شامل ہیں۔۔ پیارے دوستو اس ملکہ کا تعلق روس سے تھا جس کو catherine دی گریٹ کہا جاتا تھا اس نے روس پر تقریبا چونتیس برس تک حکومت کی، یہ ان ملکہ میں شامل کی جاتی ہے جن کے نام کے ساتھ دی گریٹ کا لفظ لگایا جاتا ہے.

یہ ملکہ ایک بد-کارعورت تھی لیکن اس کا شوہر اس کو ہمیشہ ان برے کاموں سے منع کرتا تھا لیکن اس ملکہ کے اوپر جس مانی خواہشات کا بھوت سوار تھا اور یہی وجہ تھی کہ اس نے اپنے تمام ساتھیوں کے ساتھ مل کر اپنے خاوند کا قتل کروا دیا تاکہ اس کے اور اس کے جن – سی تسکین کے درمیان کسی قسم کی رکاوٹ نہ آسکے.

یہ ملکہ ایک بد-کارعورت تھی لیکن اس کا شوہر اس کو ہمیشہ ان برے کاموں سے منع کرتا تھا لیکن اس ملکہ کے اوپر جس مانی خواہشات کا بھوت سوار تھا اور یہی وجہ تھی کہ اس نے اپنے تمام ساتھیوں کے ساتھ مل کر اپنے خاوند کا قتل کروا دیا تاکہ اس کے اور اس کے جن – سی تسکین کے درمیان کسی قسم کی رکاوٹ نہ آسکے. اس ملکہ کے دور میں روس نے تعلیمی اور ثقافتی لحاظ سے بہت ترقی حاصل کی اس نے روس کے اندر تعلیمی نظام کا نفاذ کیا اور کئی نئے تعلیمی ادارے بنائے اس نے ملک کے اندر ہسپتالوں اور طبی ادویات کا ایک جال بچھا دیا دوستو جہاں اس ملکہ نے اچھے کام کئے وہاں یہ روس کی عیاش ترین اور بد-کار قسم کی عورت تھی

اس نے اپنے شوہر کی حکومت گرانے کے بعد اپنے وفادار ساتھیوں کے ساتھ خوب رنگ رلیاں بنائیں اور جس کسی کو بھی اس ملکہ پر شک ہوتا وہ اس پر چوری کا الزام لگا کر اس کو ختم کروا دیتی. اپنے دور حکومت میں اچھے کاموں کے ساتھ ساتھ یہ برے کاموں میں ڈوبتی رہی یہ من پسند عاشق بناتی اور عاش قوں کو بدکاری کے لیے استعمال کرتی ان عاش قوں کو چپ کروانے کے لیے یہ ملکہ ان کو بھاری انعام بھی ادا کرتی. کچھ لوگ یہ بھی کہتے ہیں کہ یہ ملکہ جس کے ساتھ جن . سی تسکین حاصل کرتی اس کے بعد اس کو قت ل کروا دیتی تاکہ یہ بات راز رہے روز بروز اس ملکہ کے عاشق تبدیل ہوتے رہے اور ان میں اس کا ایک فوجی افسر بھی شامل تھا

یہ شخص ملکہ کے لیے اس قدر عزیز تھا کہ جس نے ملکہ کے ساتھ ہم بس – تری کرنی ہوتی تھی یہ اس کا انتخاب کرتا تھا.دوستو اس ملکہ کی ایک خادمہ بھی تھی جو ہر اس مرد کے ساتھ ہم بس.تری کرتی تھی جس نے بعد میں ملکہ کے ساتھ ہم بس.تری کرنی ہوتی تھی اگر وہ شخص ملکہ کی خواہشات کے مطابق ہوتا تو وہ ملکہ کے ساتھ ہم.بس.تری کرتا ورنہ وہیں سے واپس بھیج دیا جاتا، ملکہ بیماری کی حالت میں بھی اپنی حرکتوں سے باز نہ آئی اپنے سے چالیس سال کم عمر لڑکوں سے ہم.بس.تری کرنا شروع کر دی.

اس کے تعلقات مردوں کے ساتھ ہی نہیں رہے بلکہ اس کے تعلقات مختلف جانوروں کے ساتھ بھی رہے جن میں گھوڑوں کے ساتھ خصوصی تعلق تھا ایک روایت کے مطابق اس کی موت اپنے گھوڑے کے ساتھ ہم . بس . تری قائم کرتے وقت ہوئی تھی. تو جی دوستو یہ تھی تاریخ کی وہ بد.کارعورت جس کے مردوں کے ساتھ ساتھ جانوروں کے ساتھ بھی جن.سی تعلقات تھے.

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.