موت کے علاوہ ہر بیماری کا علاج بس ایک آیت

یقین کیجئے کہ صحت کی قدر اور اس کی حفاظت ایک مسلمان کا فرض ہے کسی نے بہت پیاری مثال دی ہے کہ جس طرح حقیر دیمک بڑے بڑے کت خانوں کو چاٹ کر تباہ کرڈالتی ہے اسی طرح صحت کے معاملے میں معمولی سی غفلت بھی حقیر سی بیماری کا پیش خیمہ بن سکتی ہے صحت و عافیت اور پرسکون زندگی کو بحال رکھنا

اور بیماری لاحق ہونے پر اس سے چھٹکارا حاصل کرنا انسانی فطرت کا اہم تقاضا ہے یاد رہے کہ انسان کو لاحق ہونے والے امراض دونوں طرح کے ہیں ایک روحانی اور دوسرا جسمانی امراض اور ان دونوں کا شافی علاج قرآن مقدس اور احادیث مبارکہ میں ہے جیسا کہ اللہ پاک کا فرمان بھی ہے وننزل من القرآن ماھو شفاء و رحمۃ للمومنین ولا یزید الظالمین الا خسارا یعنی ہم نے جو قرآن نازل کیا ہے اس میں جسمانی و روحانی بیماریوں کے لئے شفاء ہے اور اہل ایمان کے لئے سراپا رحمت ہے لہٰذا آج ہم نے آپ کے لئے ایک ایسا ہی قرآن وظیفہ ڈھونڈا ہے

ایسا وظیفہ یا ایسی دعا جو دوا پر بھاری ہے اس عمل کی مدد سے اللہ رب العزت مریضوں کو دائمی صحت عطافرمائیں گے بلکہ ہر قسم کی بیماری کا روحانی علاج اور تمام مشکلات کو انشاء اللہ حل فرمادیں گے تمام پریشانیوں سے نجات عطافرمائیں گے اور تمام مسائل کو بھی حل فرمادیں گے بس ایک بات یاد رکھئے کہ جب بھی کوئی وظیفہ اختیار کریں تو مستقل مزاجی اور پابندی کے ساتھ کیجئے ایک چھوڑ کر دوسرا اور دوسرا چھوڑ کر تیسرا کرنا بھی نفع مند ثابت نہیں ہوتا ہے بلکہ اکثر اوقات نقصان ہوتا دیکھا گیا ہے ۔ یقین کے ساتھ عمل کریں شک عمل کو ضائع کردیتا ہے درحقیقت تمام وظائف اللہ جل شانہ کے حضور پیش ہو کر ہمارے حالات اور پریشانیوں میں آسانی اور سہولت لانے کے لئے اجازت چاہتے ہیں اس لئے اللہ جل شانہ ہی کی ذات سے ہونے کا سوفیصد یقین ہی فائدہ دے گا آج کا یہ وظیفہ اللہ جل شانہ کی مدد حاصل کرنے کے لئے اہل اللہ سے ثابت ہے اولیاء کا حیرت انگیز روحانی و قرآنی ایسا مجرب عمل ہے جس میں اللہ کا فرمان بھی ہے یعنی قرآنی آیت اور حضور ﷺ کا طریقہ بھی یعنی سنت کے مطابق عمل بھی اسی وجہ سے یہ ہر قسم کی بیماری اور پریشانی کے لئے تیر بے خطا اور آزمودہ عمل ہے ہزاروں نے آزمایا آپ بھی یقین کی قوت کے ساتھ کیجئے

اللہ پاک اس عمل کو ضرور قبول فرماتے ہیں جس میں طاقت ہو اگر آپ چاہتے ہیں کہ اس وظیفہ صحت کا آپ کو پورا فائدہ ہو تو اس وظیفہ کو پورے یقین کے ساتھ ایمان کے ساتھ کیجئے گا ۔بیماری اللہ کی طرف سے آتی ہے اور اس سے شفاء بھی اللہ ہی دیتا ہے جیسا کہ قرآن پاک میں ارشاد ہے کہ جب میں بیمار ہوتا ہوں وہ اللہ ہی مجھے شفاء دیتا ہے بیماریوں کے علاج کے لئے مختلف طریقہ ہائے علاج ہیں اور انسان بیماری پر قابو پانے کے لئے ہر وقت کوشاں رہتا ہے اس کے لئے نت نئی دوائیں استعمال کرتا ہے لیکن شفاء صرف اس وقت ملتی ہے جب اللہ کی طرف سے منظوری ہو رسول پاک ﷺ کا ارشاد ہے ہر بیماری کے علاج کے لئے دوا ہے اور جب دوا کے اثرات بیماری کی ماہیت کے مطابق ہوتے ہیں تو اس وقت اللہ کے حکم سے مریض کو شفاء ہوجاتی ہے ۔عمل یہ ہے کہ آپ نے واذا مرضت فھو یشفین کو اول و آخر درود پاک کے ساتھ 31 مرتبہ پڑھ لیجئے اور مریض پر دم کیجئے اور اللہ پاک سے گڑگڑا کر دعاکیجئے۔اللہ ہم سب کا حامی وناصر ہو۔آمین

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.